پی سی بی نے ڈومیسٹک سیزن کیلئے کوچز کا اعلان کردیا

Pakistan Circket Board
کیپشن: Pakistan Circket Board
Stay tunned with 24 News HD Android App
Get it on Google Play

نشتر پارک (حافظ شہباز علی ) پاکستان کرکٹ بورڈ نے  266 میچز پر مشتمل ڈومیسٹک سیزن 22ـ2021 کے لیے چھ کرکٹ ایسوسی ایشنز میں 42 ٹیموں کے کوچز کا اعلان کیا ہے، یہ تقرریاں مکمل طور پر پرفارمنس کے عمل کا جائزہ لینے کے بعد کی گئی ہیں، متعدد کوچز جن کی کارکردگی اطمینان بخش تھی انہیں ترقی سے نوازا  گیا ہے جبکہ کچھ کوچز کو مختلف سطحوں پر ہیڈ کوچنگ  کی ذمہ داریاں دی گئی ہیں۔

ٹیم کو جیت کے لیے تیار کرنا کھلاڑیوں کی کارکردگی کو بہتر بنانا۔2020ـ21 کے سیزن میں خیبر پختونخواہ کو تینوں ٹائٹل  قائد اعظم ٹرافی ، نیشنل ٹی 20 کپ اور پاکستان کپ  میں جیت میں کردار ادا کرنے والے  پاکستان کے سابق آل راؤنڈر عبدالرزاق کو سنٹرل پنجاب کی فرسٹ الیون کے کوچنگ اسٹاف کی قیادت سونپی گئی ہے۔

اس کے ساتھ سابق پاکستانی انٹرنیشنل کرکٹر اکرم رضا اور ہمایوں فرحت شامل ہیں دونوں کو سنٹرل پنجاب کے سیکنڈ الیون کوچنگ سیٹ اپ سے فرسٹ الیون  میں بطور اسسٹنٹ اور فیلڈنگ کوچز  ترقی دی گئی، گزشتہ سیزن میں سنٹرل پنجاب فرسٹ الیون کی کوچنگ کرنے والے شاہد انور کو سدرن پنجاب فرسٹ الیون کا ہیڈ کوچ مقرر کیا گیا ہے، ان کے ساتھ اعزاز چیمہ اور عرفان فاضل اسسٹنٹ اور فیلڈنگ کوچ کے طور پر شامل ہیں۔

ڈومیسٹک سیزن 22ـ2021 کے لیے  عبدالرحمن سدرن پنجاب کوچنگ سٹاف کی سربراہی کے بعد خیبر پختونخوا ہ کی ٹیم کی کوچنگ کریں گے، اْن کے ساتھ تجربہ کار کوچ رفعت اللہ مہمند اور محمد صدیق معاون اور فیلڈنگ کوچ کے طور پر شامل ہیں، اعجاز احمد جونیئر کو ناردرن فرسٹ الیون ٹیم کا ہیڈ کوچ مقرر کیا گیا ہے۔   

سابق بین الاقوامی بیٹسمین اعجازجنہوں نے 13000 سے زائد رنز بنائے اور فرسٹ کلاس کرکٹ میں 171  شکار کیے ہیں۔ ان کے ساتھ پاکستان کے سابق فاسٹ باؤلر سمیع اللہ نیازی شامل ہیں  جو گزشتہ سیزن میں سنٹرل پنجاب فرسٹ الیون کے اسسٹنٹ کوچ تھے اور فہد اکرم جو گزشتہ سیزن میں کرکٹ ایسوسی ایشن کی انڈر 19 ٹیم کے اسسٹنٹ کوچ کے طور پر خدمات انجام دے رہے تھے اب انہیں ناردرن فرسٹ الیون   میں فیلڈنگ کوچ مقرر کیا گیا۔

پاکستان کے سابق بیٹسمین باسط علی اور فیصل اقبال سندھ اور بلوچستان فرسٹ الیون ٹیموں کے ہیڈ کوچ کے طور پر اپنے کام کو جاری رکھیں گے۔سندھ میں محمد مسرور نے اقبال امام کی جگہ اسسٹنٹ کوچ اور حنیف ملک گزشتہ سیزن میں سندھ انڈر 19 کے اسسٹنٹ کوچ  رہے ہیں، اب وہ فرسٹ الیون ٹیم کے فیلڈنگ کوچ ہوں گے، بلوچستان کے اسسٹنٹ کوچ  اور جنوبی پنجاب کے U19 اور U16  کے ہیڈ کوچ  میرٹ کی بنیاد پر بھرتی کیے جائیں گئے، حسین کھوسہ بلوچستان فرسٹ الیون کے فیلڈنگ کوچ کے طور پر برقرار رہیں گے۔

نیشنل ہائی پرفارمنس سنٹر میں  کوچنگ کے سربراہ گرانٹ بریڈ برن نے جانچ کے عمل کی نگرانی کی، جس کے بعد انہوں نے ڈائریکٹر ہائی پرفارمنس کو اپنی سفارشات پیش کیں جسے  چیف ایگزیکٹو نے  منظور کیا۔

گرانٹ بریڈ برن نے کہا کہ یہ بہت ضروری ہے کہ ہم اپنے کوچز کی کارکردگی کو مسلسل بہتر بناتے رہیں تاکہ وہ ہر طرح کے ماحول میں خود کو ثابت کرسکیں، اس سے نہ صرف ہما رے کوچنگ اسٹاف کی تعداد کو بڑھانے میں مدد ملے گی بلکہ ایک سے زیادہ کوچز سے سیکھ کر مضبوط  اورخود  پرا نحصار کرنے والے کھلاڑی بھی تیار ہوں گے جو اپنے کیریئر کے ابتدائی مراحل سے مختلف چیلنجز کا مقابلہ کرنے کے لیے تیار  ہونگے۔

انہوں نے مزید کہا کہ عبدالرزاق نے بطور ہیڈ کوچ شاندار ڈیبیو سیزن کیا تھا اور اسی لیے ان سے کہا گیا ہے کہ وہ سنٹرل پنجاب کی جانب سے کوچنگ کی قیادت کریں۔ یہ اقدام رزاق کے لیے نئے چیلنج لے کر آئے گا اور مجھے اس میں کوئی شک نہیں کہ وہ  یہ کر سکتا ہے۔

 ان کا مزید کہنا تھا  کہ شاہد انور اور عبدالرحمان کو مقرر کرنے کے  فیصلے کے پیچھے یہی  وجہ کارفرما ہے  کہ  وہ دونوں   تجربہ کار ہیں۔شاہد نے سدرن پنجاب اور خیبر پختونخواہ  کی کوچنگ کی ذمہ داری ادا کی ہے جبکہ رحمان  کی  کوچنگ میں  سدرن پنجاب نے  نیشنل ٹی ٹونٹی کپ کا فائنل کھیلا۔باسط علی اور فیصل اقبال نے گزشتہ سیزن میں پہلی بار فرسٹ الیون ٹیموں کی کوچنگ کی اور انہیں سندھ اور بلوچستان کے ساتھ ایک اور سیزن میں مقرر کیا گیا ہے تاکہ وہ اپنی  ٹیموں کو مزید مضبوط بنا سکیں۔

  انہوں نے  کہا کہ میں کوچ مقرر ہونے والے  ہر اس شخص کو مبارکباد دینا چاہتا ہوں ندیم خان نے یہ بھی کہا کہ ڈومیسٹک کرکٹ سیزن 2021ـ22  دلچسپ اور ایکشن سے بھرپور ہو گا۔ انہوں نے کہا یہ تمام تقرریاں میرٹ کی بنیاد پر کی گئیں  ہیں۔

انہوں نے بتایا بہت سے کوچزنے  سیزن 21ـ2020 میں اپنی پرفارمنس کی بنیاد پر پروموشن حاصل کیے ہیں، یہ طریقہ کار کوچز کو  ٹاپ لیول تک جانے کا راستہ فراہم کرتا ہے  اور  اس سے ہم  کوچنگ کا بہترین مہیا کرنے کی پوزیشن میں ہونگے، اس سال  ڈومیسٹک سطح پر کوچز کی تعداد میں بھی اضافہ ہوا ہے جس میں ہر کرکٹ ایسوسی ایشن دو U19 اور U16 ٹیمیں میدان میں اتارے گی، یہ اقدام سابق کرکٹرز کے لیے مواقع پیدا کرتا رہے گا۔

انہوں نے مزید بتایا کہ  جب ہم نے 93 سٹی کرکٹ ایسوسی ایشن ٹیموں کے لیے کوچز مقرر کیے، کوچنگ کا کردار ادا کرتے ہوئے ک وہ کھیل سے منسلک رہیں گے  اور ہمارے سابق کرکٹر ز کے لیے روزگار کے زیادہ سے زیادہ مواقع پیدا ہونگے، ٹاپ لیول پر ہم نے اپنے کوچز کے معیار کو مزید بہتر کرنے کے لیے  فرسٹ الیون کوچنگ پینل کو تبدیل کر دیا، ہم نے پچھلے سال اعادہ کیا تھا  کہ پی سی بی اعجاز احمد جونیئر کے وسیع تجربے سے فائدہ اٹھاتا رہے گا، اعجاز کو فرسٹ الیون کوچنگ سیٹ اپ میں واپس لایا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں پرامید ہوں کہ یہ تبدیلیاں کرکٹ کے معیار کو مزید بلند کریں گی اور ہم اپنے کوچز کے پول کو بڑھاتے اور مضبوط کرتے رہیں گے۔