فرانسیسی کار میکر " پیجو" کی پاکستان میں دھماکے دار انٹری، جدید ترین ماڈل متعارف

PEUGEOAT cars in Pakistan
PEUGEOAT cars

ویب ڈیسک: پیجو لکی موٹرز کارپوریشن نے معروف فرانسیسی کار کے ماڈلز ''پیجو 2008''، ''پیجو ''5008اور ''پیجو 3008'' کو پاکستان  لانے کا اعلان کردیا۔

رپورٹ کے مطابق ''پیجو 2008'' کی متعدد کاریں پاکستانی سڑکوں پر دوڑتی دیکھی گئی ہیں، یادرہے پیجو 2008 بھی ایک ایس یو وی ہے اور لکی موٹرز کارپوریشن اس سےپہلے ''کیا سٹونک'' اور '' کیا اسپورٹیج'' کامیابی سے لانچ کرچکی ہے۔ پیجو 2008  فرنٹ وہیل ڈرائیو،  چھ گئیرز اور 102 لٹر کے ٹربو چارجڈ تھری سلنڈر 131 ہارس پاور کے پٹرول انجن اور 220 نیوٹن میٹرز کے ٹارک کے ساتھ دستیاب ہے۔

تاہم پیجو کا انٹیریئر سب سے مزیدار ہے تھری ڈی آئی کاک پٹ جس میں 7 انچ کی ٹچ اسکرین، چھت میں موجود انسٹرومنٹ پینل ، چابی کے بغیر گاڑی میں داخلہ اور اسٹارٹنگ، متعدد ڈرائیو موڈ، کھلی سن روف ،جدید ترین انفوٹینمنٹ یونٹ اور مزید ہائی ٹیک سہولیات سے لیس پیجو کی ڈرائیونگ سحر انگیز ہے۔

کروز کنٹرول، تصادم سے بچنے کیلئے وارننگ، اندھے موڑ کی نشاندہی، پہاڑی علاقوں میں محفوظ ڈرائیونگ کے لئے '' ہل اسٹارٹ اسسٹ'' ، شہرمیں محفوظ ڈرائیونگ کے لئے ''لین کیپنگ اسسٹ'' ، الیکٹرونگ سٹیبلٹی پروگرامنگ (ای ایس پی) ، غنودگی  سے بچاؤ کے لئے الرٹ، روڈسائن، حدرفتار کی شناخت ، 180 ڈگری کیمرہ اور دیگر سہولیات نے اسے محفوظ ترین گاڑی بھی بنادیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: یورپی کارمیکر ''واکس ویگن'' اور'' سکوڈا'' کا پاکستان میں پلانٹ لگانے کا اعلان

 

اسی طرح '' پیجو 3008'' کو کیا اسپورٹیج کے مقابلے میں بطور ایس یو وی کراس اوور متعارف کرایا جارہا ہے۔ آل فوروہیل ڈرائیو چھ آٹو میٹک گئیرز سے لیس اور 1.6 لٹر ٹربو چارجڈ 4 سلنڈر کا 162 ہارس پاور اور 240 نیوٹن میٹر کے ٹارک کے ساتھ پٹرول انجن دستیاب ہے۔ باقی ساری سہولیات 2008 والی ہیں تاہم 10 اسپیکرز کے ساتھ فوکل ساؤنڈ سسٹم دیکھنے اور سننے کی چیز ہے ۔ جس کے ساتھ اینڈرائڈ پٹو اور ایپل کارپلے اٹیچ ہوسکتا ہے اسی طرح ان بورڈ نیوی گیشن سے پارکنگ اسپیس اور سپیڈ کیمرے کی نشاندہی ہوسکے گی۔

اسی طرح پیجو 5008 سات نشستوں والی نسبتا چھوٹی ایس یو وی ہے  ساری سہولیات سے لیس  ہے 360 ڈگری کیمرے اور 10 انچ کی اسکرین ہٹ کے ہے جبکہ '' مائی پیجو'' ایپ کی بدولت گاڑی کی لوکیشن ٹریس کی جاسکے گی جبکہ آٹو کروز کنٹرول سمیت بہت سارے دیگر مستقبل کے فیچرز استعمال کئے جاسکیں گے۔