پنجاب یونیورسٹی کا دیوالیہ ہونے کا خدشہ،3 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی


اکمل سومرو : پنجاب یونیورسٹی کو سالانہ دو ارب روپے تک بجٹ خسارہ، یونیورسٹی کے مالی خسارے پر کس طرح سے قابو پایا جائے۔ وائس چانسلر نے نوٹس لینے کے بعد تین رُکنی کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔

یہ بھی لازمی پڑھیں:نیوز بلیٹن3بجے 13 نومبر 2018  

پنجاب یونیورسٹی کا بجٹ خسارہ دو ارب روپے تک پہنچنے پر نئے وائس چانسلر ڈاکٹر نیاز احمد اختر کی ہدایت پر خصوصی کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔ وائس چانسلر نے ڈین فیکلٹی آف سوشل اینڈ بہیوریل سائنسز ڈاکٹر زکریا ذاکر، پرنسپل کالج آف ارتھ اینڈ اینوائرنمنٹل سائنسز ڈاکٹر ساجد رشید اور ممبر سنڈیکیٹ پنجاب یونیورسٹی ڈاکٹرمحبوب حسین کو کمیٹی کا ممبر بنایا گیا ہے۔

اس خبر کو لازمی پڑھیں:ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹیز کے وارے نیارے، بڑا بجٹ جاری

پنجاب یونیورسٹی میں ریٹائرڈ ملازمین کی پنشن اور ہر سال تنخواہوں میں دس فیصد اضافے کے باعث بجٹ خسارے میں اضافہ ہورہا ہے جب کہ یونیورسٹی کے نئے ذرائع آمدن نہیں بڑھ رہے۔ پنجاب یونیورسٹی نے اپنے نئے بجٹ میں پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن، ہائر ایجوکیشن کمیشن پاکستان، حکومت پنجاب سے گرانٹس ملنے کی توقع ظاہر کی ہے۔ تاہم وائس چانسلر کی ہدایات پر قائم ہونے والی کمیٹی بجٹ خسارے پر قابو پانے کے لیے تجاویز مرتب کرے گی جسے بعد میں سنڈیکیٹ کے اجلاس میں بھی پیش کیا جائے گا۔