قبرستانوں کی چار دیواری نہ کرنےپر لاہور ہائیکورٹ برہم

01:32 PM, 30 Aug, 2018

محمد ساجد

ملک اشرف :شہرکے قبرستانوں کی چاردیواری نہ کرنےکامعاملہ ، لاہور ہائیکورٹ نے قبرستانوں کی چار دیواری نہ کرنے پر اظہار برہمی کرتے ہوئے لارڈ مئیر مبشر جاوید اور چیف آفیسر لاہور میونسپل کارپوریشن کو تین ستمبر کو طلب کرلیا۔
تفصیلات کے مطابق سیکرٹری بلدیات انوربلوچ،اے سی رائیونڈعاصم سلیم سمیت دیگر افسران پیش ہوئے ،اے سی رائیونڈ نے قبرستانوں کی واگزاراراضی کی رپورٹ جمع کرواتے ہوئے بتایا کہ 80کنال سے زائد اراضی واگزارکرائی، اے سی نے عدالتی استفسار پر بتایا کہ فنڈز نہ ہونے کے باعث چاردیواری نہیں کروا سکے۔اسٹنٹ کمشنر نے کہا کہ قبرستانوں کی چاردیواری کامعاملہ لارڈمیئر کے دائرہ ا ختیار میں آتاہے،عدالت نے کمرہ عدالت میں موجود سیکرٹری بلدیات سے چار دیواری کے حوالے سے استفسارکیا تو وہ تسلی بخش جواب نہ دے سکے، جس پر عدالت ان پر برہمی کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ ماشااللہ آپ کی یہ کارکردگی کی یہ حالت ہے، اگرعدالتیں کچھ کرتی ہیں تومداخلت کاشورمچایاجاتاہے۔

یہ بھی لازمی پڑھیں:نیوز بلیٹن 3بجے 14 نومبر2018  

چیف آفیسر کارپوریشن نے قبرستانوں کی چاردیواری کے لئے ایک ماہ کی مہلت کی استدعا کی جو عدالت نے مسترد کرتے ہوئے ریمارکس دئیے کہ ایک ماہ لگاتودیگرقبرستان کی اراضی بھی غائب ہوجائےگی، عدالت نے کہا کہ کیوں نہ چیف سیکرٹری پنجاب اور لارڈ مئیر کو آج ہی طلب کرکے ان سے جواب طلبی کریں ۔
عدالت نے سیکرٹری بلدیات کو قبرستانوں کی چار دیواری کیلئے لاگت کا تخمینہ اور ٹائم فریم کے حوالے سے رپورٹ تین ستمبر کو پیش کرنیکاحکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

مزیدخبریں