شہبازشریف کا چیف الیکشن کمشنر کوخط، اہم مطالبہ

Shehbaz Sharif , letter , Chief Election Commissioner
shahbaz sharif latter

عمراسلم  : صدرمسلم لیگ(ن) شہبازشریف کا چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان کو خط ، ڈسکہ الیکشن چوری  میں ملوث افسران اور عملے کیخلاف  قانونی کارروائی کامطالبہ۔

 صدرمسلم لیگ(ن) شہبازشریف کا چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان کو خط   جس میں  چیف الیکشن کمشنر سے ڈسکہ الیکشن چوری میں  ملوث افسران اور عملے کے خلاف قانونی کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا  گیا ہے ۔ انہوں  نےکہاکہ پس پردہ رہ کر انتخابی دھاندلی کرانے، غیرقانونی ہدایات دینے والے وفاقی اور صوبائی حکومت کے ذمہ داروں کو بے نقاب  جبکہ مزید تحقیقات کرکے وفاقی اور صوبائی سطح پر ذمہ داروں کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے۔

قائد حزب اختلاف کاکہناتھاکہ پس پردہ رہ کر انتخابی دھاندلی کرانے ، ضلعی حکام کو مجرمانہ عزائم کے تحت ہدایات جاری کرنے والوں کو پکڑا جائے۔ الیکشن ایکٹ کے سیکشن 191 کے تحت ڈسکہ الیکشن کے تمام ملوث پائے گئے ،افسران وعملہ کے خلاف عدالت میں شکایات دائر کی جائیں ،نشاندہی ہونے والےملوث لوگوں کے خلاف سیکشن 184، 186 اور187 کے تحت سزا کا عمل شروع کیاجائے،سیکشن190 کے تحت اختیار کے تحت ملوث افراد کے خلاف سیکشن167، سیکشن175، 174 اور183 کے مطابق کارروائی کی جائے ۔

صدرمسلم لیگ (ن) شہبازشریف کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتوں کی مشاورت سے ایکٹ، رولز، ضابطہ اخلاق، طریقہ ہائےکارمیں ترامیم کی جائیں تاکہ آئندہ ڈسکہ جیسی بے ضابطگیاں نہ ہوں ۔این اے 75 سیالکوٹ پانچ (ڈسکہ) ضمنی الیکشن پر فیکٹ دو فائنڈنگ رپورٹس جاری ہوچکی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پریذائیڈنگ افسران، انتخابی عملہ، ڈی سی اور ڈی پی او سیالکوٹ مس کنڈکٹ اور غیرقانونی سرگرمیوں کے مرتکب پائے گئے جبکہ ملوث افراد نے نتائج کو حکومت کے حق میں موڑنے کے لئے انتخابی عمل پامال کیا ۔ افسران نےانتخابی عملے کو غیرقانونی احکامات دیئے ، مجرمانہ طرز عمل کا ارتکاب کیا ۔

رپورٹ سے ثابت ہوا کہ سرکاری افسر کی رہائش گاہ پر حکومتی اہلکاروں کے ساتھ مسلسل اجلاس ہوتے رہے اور رپورٹ سے ثابت ہوا کہ  ملاقاتوں میں ایک مشیر وزیراعلیٰ اور وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ کا افسر بھی شریک رہے ، انہوں نے  کہاکہ ڈی ایس پیز اور دیگر پولیس اہلکار بھی انتخابی ڈیوٹی انجام دیتے رہے، قانونی، انتخابی اور سکیورٹی پلان کی خلاف ورزیاں کی گئیں۔

ضمنی انتخاب کالعدم قرار دینے، ڈسی اور ڈی پی او سمیت متعلقہ افسران کی معطلی اور الیکشن کمشن کے دیگر بروقت فیصلوں کو سراہتا ہوں جبکہ الیکشن کمشن ملوث پائے گئے تمام ذمہ داروں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کا فوری آغاز کرے اور الیکشن کمشن کے ان اقدامات سے مستقبل میں ایسی بے ضابطگیوں اور غیرقانونی طرز عمل کو روکنے کی سمت مقرر ہوسکے گی۔