قدرتی ہیروں سے بنا دنیا کا سب سے مہنگا فیس ماسک

قدرتی ہیروں سے بنا دنیا کا سب سے مہنگا فیس ماسک

 سٹی 42:گزشتہ سال جب کورونا وائرس نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لیا تو ہر جگہ ماسک کی مانگ میں اضافہ دیکھا گیا اور اب وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ان ماسکس کو مزید جدت دی جا رہی ہے۔

اب لوگ بالخصوص خواتین ماسک وبا سے بچنے کے ساتھ ساتھ اسے فیشن کے طور پر بھی استعمال کر رہی ہیں اور خوبصورت ماسک کو ترجیح دے رہی ہیں۔حال ہی میں اسرائیل کی ایک لگژری جیولری برانڈ کے سربراہ اساک لیوی نے ایک فیس ماسک تیار کیا ہے جو دنیا کا سب سے مہنگا اور قیمتی ماسک ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان کے ایک پرانے کسٹمر نے انہیں ایک ایسا ماسک بنانے کا چیلنج دیا تھا جو ایف ڈی اے سے منظوز شدہ ہو اور ساتھ ہی وہ دنیا کا سب سے مہنگا ماسک ہو۔اساک لیوی نے کہا کہ یہ ماسک بنانا ہمارے لیے کافی مشکل تھا کیونکہ ہمیں اس ماسک میں جواہرات لگانے تھے اور ساتھ ہی اسے آرام دہ بھی بنانا تھا۔

لگژری جیولری برانڈ کے سربراہ نے اپنی ٹیم کے ساتھ مل کر 15 لاکھ ڈالر مالیت کا ماسک تیار کیا جس میں 250 گرام 18 کیرات سونا اور 3 ہزار 608 کے قریب قدرتی کالے اور سفید ہیرے لگائے گئے، اس ماسک کا وزن 9 اونس ہے۔

یاد رہے کہ عالمی ادارہ صحت یورپ  کے ڈائریکٹر ہنس کلگو نےکہا ہے کہ اگر 95 فیصد لوگ محفوظ ماسک پہنتے ہیں تو ملک کے کسی بھی حصے میں کورونا وائرس کے سلسلے میں لاک ڈاؤن لگانے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق ہنس کلگو  کا پریس بریفنگ کے دوران کہنا تھا کہ اگر ہم سبھی اپنے حصے کا کام کریں یعنی محفوظ ماسک پہنیں تو لاک ڈاؤن سے بچاجاسکتا ہے،میں اس بات سے پوری طرح متفق ہوں لاک ڈاؤن کورونا وائرس کے خلاف اٹھایا جانے والا آخری طریقہ ہے۔ماسک پہننا کورونا وائرس کے خلاف مکمل بچانے کے طورپر کام نہیں کرتا ،اس کے ساتھ سوشل ڈسٹنسنگ اور ہاتھوں کے سینیٹائز کرنے سے لے کر تمام دیگر طریقوں کو بھی اپنانا ضروری ہےلیکن ماسک پہننا  ضروری ہے۔