گلوکارہ گل پانرہ کے ڈانس ویڈیو کی انکوائری مکمل

گلوکارہ گل پانرہ کے ڈانس ویڈیو کی انکوائری مکمل

(سٹی42)معروف پشتو گلوکار ہ گل پانڑہ کی لنڈی کوتل  ڈپٹی کمشنر کے ریسٹ ہاؤس میں بنائی گئی ٹک ٹاک ویڈیو کے معاملہ پرانکوئری رپورٹ مکمل کرکے خیبر پی کے چیف سیکرٹری ڈاکٹر کاظم نیاز کو بھیجوادی گئی۔

تفصیلات کے مطابق خیبر پی  کے ڈپٹی کمشنر کے ریسٹ ہاؤس میں معروف پشتو گلوکارہ گل پانڑہ نے ٹک ٹاک ویڈیو بنائی جو انٹرنیٹ پر وائرل ہوگئی جس پر ایکشن لیتے ہوئےمعاملہ کی تحقیقات کا حکم دیا گیا تھا،لنڈی کوتل  ڈپٹی کمشنر کے ریسٹ ہاؤس میں بنائی جانے والی ویڈیو پر انکوئری رپورٹ مکمل کرکے خیبر پی کے چیف سیکرٹری ڈاکٹر کاظم نیاز کو بھیجوادی گئی۔

گزشتہ دنوں گلوکار ہ گل پانڑہ نے لنڈٖی کوتل ڈپٹی کمشنر کے ریسٹ ہاؤس میں ٹک ٹاک ویڈیو بنائی تھی جو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی جس پرصارفین کے ملے جلے کمنٹس سامنے آرہے ہیں۔معروف گلوکارہ نےڈپٹی کمشنر خیبر قبائلی ضلع کے بنگلے میں پشتو کے گانے پر ڈانس کرتے ہوئے ویڈیو بنائی ،گلوکارہ کی ٹک ٹاک ویڈیو نے سوشل میڈیا پر ایک نئی بحث شروع کردی،عوام کی جانب سے کمنٹس کا سلسلہ جاری ہوچکا ہے،ویڈیو کو دیکھ کر کچھ صارفین نے ان کی حمایت کرتے ہوئے ویڈیو کو سراہاجبکہ بعض نے اس پر دل کھول کر تنقید کی۔

دوسری جانب  ڈپٹی کمشنر کے دفتر سے جاری ایک بیان میں کہا گیاتھا کہ ضلعی انتظامیہ کا گل پانڑہ کی ٹِک ٹاک ویڈیو سے کوئی لینا دینا نہیں ہے، ویڈیو لنڈی کوتل میں ڈی سی کے بنگلے میں بنائی گئی،ڈی سی محمود اسلم نے وزیر نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئےاسسٹنٹ کمشنر محمد عمران سے 24 گھنٹوں تک رپورٹ طلب کرلی تھی۔

انتظامیہ  کاکہناتھا کہ اس معاملے کی تحقیقات کی جائے کہ کس طرح گلوکارہ اور دیگر افراد سرکاری رہائش گاہ میں داخل ہوئے اور پھر اس نے ٹِک ٹِک ویڈیو بنائی۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ویڈیو کے لئے ڈی سی سے کوئی اجازت نہیں لی گئی ہے اور نہ ہی اس معاملے کو اسسٹنٹ کمشنر کے سامنے لایا گیا تھا۔

ضلعی انتظامیہ کا اس پر مزید بات کرتے ہوئے کہنا تھا کہ  گلوکارہ گل پانڑہ اپنے اہلخانہ سے ملنے آئی تھیں اور سرکاری  رہائش گاہ میں آنے پر پروٹوکول کا کوئی سوال نہیں اٹھتا۔معاملہ  سامنے آنے پر ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ مہمانوں کا استقبال کیا جاتا ہے مگر ایسے بغیر اجازت کسی کو  سرکاری عمارت میں داخل ہونے اور پھر ٹِک ٹِک ویڈیوز بنانے کی اجازت نہیں۔ انہوں نے کہا کہ واقعے میں ملوث پائے جانے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔