پاکستانی بچوں میں وبا کا خطرہ، عالمی ادارہ صحت کی وارننگ

WHO warn Pakistan
Children in Hospital

ویب ڈیسک: پاکستان میں ڈینگی کے بعد بچوں میں  خسرہ کی وبا پھوٹنے کا خدشہ، ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے خبردار کردیا۔

عالمی ادارہ صحت نے خبردار کیا ہے کہ کورونا اورڈینگی کےبعد پاکستان سمیت دنیا بھر کے 22 ملین بچوں کو سب سے تیزی سے پھیلنے والی وبا خسرے کا سامنا ہے کیونکہ کورونا کی وجہ سے پاکستان، نائیجریا، کانگو، ایتھوپیا، بھارت، انڈونیشیا، انگولا، فلپائن، برازیل اور افغانستان میں کروڑوں بچوں کو بروقت خسرے کی پہلی ویکیسین نہیں لگائی جاسکی تھی۔

اس خطرے کا سامنا امریکہ جیسے ترقی یافتہ ملک کو بھی ہے جہاں 2019میں وبائی خسرے کے ریکارڈ کیسز سامنے آئے تھے۔ یاد رہے 1992 کے بعد امریکا میں پہلی دفعہ اتنے کیسز سامنے آئے ہیں۔ 2020 میں صرف 70 فیصد بچوں کو ویکسین کی دوسری خوراک لگی تھی۔

عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر برائے امیونائزیشن ڈاکٹر کیٹ اوبرائن نے موجودہ صورت حال کو طوفان سے قبل خاموشی قرار دیتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ دنیا بڑے بحران کیلئے تیار رہے۔ انہوں نے کہ کورونا کی ویکسینیشن ضروری تھی مگر اسے دوسری مہلک بیماریوں کی قیمت پر ترجیح نہ دی جائے۔