پی ایس ایل 7 کا سپلیمنٹری اور ریپلیسمنٹ ڈرافٹ مکمل

Pakistan Super League
Pakistan Super League

نشتر پارک (حافظ شہباز علی) پاکستان سپر لیگ کی تمام چھ فرنچائزز نے ایڈیشن 2022 کے سپلیمنٹری اور ریپلیسمنٹ ڈرافٹ میں موجود اپنے کھلاڑیوں کا انتخاب کرلیا ہے، ڈرافٹ میں پہلی سپلیمنٹری پک ایڈیشن 2020 کی چیمپئن کراچی کنگز کو ملی، جس نے پی سی بی ڈومیسٹک کرکٹر آف دی ایئر برائے 2021 کا ایوارڈ جیتنے والے خیبر پختونخواہ کے صاحبزادہ فرحان کو اپنے اسکواڈ میں شامل کیا۔

دوسری پک میں لاہور قلندرز نے فاسٹ باؤلر محمد عمران رندھاوا کو منتخب کرلیا, اسلام آباد یونائیٹڈ نے فاسٹ باؤلر موسی خان، اور ملتان سلطانز نے انگلینڈ کے فاسٹ بولر ڈیوڈ ولی جبکہ پشاور زلمی نے محمد عمر کو منتخب کیا، دوسرا راؤنڈ ریورس آرڈر کے بعد ہوا، جہاں دفاعی چیمپئن ملتان سلطانز نے رضوان حسین کا چناؤ کیا، کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے غلام مدثر، اسلام آباد یونائیٹڈ نے ظاہر خان جبکہ لاہور قلندرز نے عاکف جاوید اور کراچی کنگز نے جارڈن تھامپسن کو اسکواڈ میں شامل کرلیا، ہر فرنچائز کو دو سپلیمنٹری پک میں زیادہ سے زیادہ ایک غیر ملکی کرکٹر کو منتخب کرنے کی اجازت تھی۔

ریپلیسمنٹ ڈرافٹ میں ملتان سلطانز نے اوڈین اسمتھ کی جگہ وکٹ کیپر بیٹر جانسن چارلس کو ڈائمنڈ کیٹیگری میں منتخب کرلیا ہے م۔کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے نوید الحق کی جگہ لیوک ووڈ (سلور میں چنے گئے)، جیمز ونس کی جگہ ول سمیڈ،  جیسن رائے کی جگہ شمرون ہیٹمائر اور افغانستان کے نور احمد کی جگہ علی عمران کو اسکواڈ کا حصہ بنا لیا ۔کراچی کنگز نے ٹام ایبل، جو انجری کی وجہ سے دستیاب نہیں ہیں، کی جگہ اویشیکا فرنینڈو کو اپنے اسکواڈ میں شامل کیا گیا۔ انہوں نے قومی انڈر 19 کپتان قاسم اکرم کی جگہ اسپنر محمد طحہ خان کو بھی اسکواڈ میں شامل کرلیا ہے۔ قاسم اکرم آئی سی سی مینز انڈر 19 ورلڈ کپ کی وجہ سے دستیاب نہیں ہیں۔

 اسی طرح سینٹ کٹس میں موجود قومی انڈر 19 اسکواڈ میں شامل ذیشان ضمیر کی جگہ محمد حریرہ کو اسکواڈ میں شامل کرلیا گیا ہے، جنہوں نے اپنے ڈیبیو فرسٹ کلاس سیزن میں شاندار ٹرپل سنچری اسکور کرنے کے ساتھ ساتھ قائد اعظم ٹرافی میں سب سے زیادہ رنز بھی بنائے تھے، ابتدائی چند میچز کے لیے انگلش وکٹ کیپر بیٹر فل سالٹ کی عدم دستیابی نے بین ڈنک کو دوبارہ لاہور قلندرز کا حصہ بنادیا، پشاور زلمی اور کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے اپنی ایک ایک سپلیمنٹری پک محفوظ رکھی ہے جبکہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے علاوہ باقی پانچوں فرنچائزز نے متبادل راؤنڈ میں اپنی پک محفوظ کر لی۔