پہیہ جام ہڑتال،ملک بھر میں مظاہرے، پی ڈی ایم آج اہم فیصلے کرے گی

پہیہ جام ہڑتال،ملک بھر میں مظاہرے، پی ڈی ایم آج اہم فیصلے کرے گی
Stay tunned with 24 News HD Android App
Get it on Google Play

(مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ 31 دسمبر تک تمام پارٹیوں کے قومی اور صوبائی اراکین اسمبلی اپنے پارٹی کے پاس استعفیٰ جمع کرادیں، ہم نے استعفے دے دیئے تو پھر ان کی طرح واپس نہیں چاٹیں گے، (آج) بدھ کو سٹیرننگ کمیٹی کااجلاس ہوگا جس میں ملک کے اندر پہیہ جام ہڑتال، شٹر ڈائون اور ملک کے مختلف ڈویژنز میں جلسوں اور مظاہروں کا شیڈول طے کیا جائے گا، اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کب کیا جائے گا؟

منگل کو اجلاس کے بعد پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئر مین بلاول بھٹو زر داری ، مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز کے ہمراہ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ پی ڈی ایم کے سربراہان کا اجلاس یہاں اسلام آباد میں منعقد ہوا جس میں  تمام پارٹی سربراہان نے اپنی اپنی ٹیم کیساتھ اجلاس میں شرکت کی۔ انہوں نے کہاکہ میاں نواز شریف، سابق صدر آصف علی زر داری اور اختر جان مینگل ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔ 

مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ سب نے بڑے عزم اور بڑے حوصلے کیساتھ اس بات کا اعلان کیا کہ 13دسمبر کو لاہور میں مینار پاکستان پر ہی جلسہ ہوگا اور حکومت نے اگر کسی قسم کی رکاوٹ ڈالنے کی کوشش کی تو ملتان سے بھی کہیں زیادہ اس کا برا حشر کر دیا جائے گا،   31 دسمبر تک تمارم پارٹیوں کے قومی اور صوبائی اسمبلیوں اراکین اپنے استعفے پارٹی قائدین کے پاس جمع کرادیں گے۔ 

  مولانا فضل الرحمن نے عمران خان کو جعلی وزیر اعظم کہہ کر مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ ڈائیلاگ کی دعوت نہیں وہ ہم سے این آر او مانگ رہے ہیں، ہم نے ڈائیلاگ کی اس کی درخوراست مسترد کر دیا ہے، وہ اس قابل نہیں ہے کہ اس کے ساتھ بات چیت کی جائے۔

مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ (آج) بدھ کو سٹیرننگ کمیٹی کا اجلاس ہوگا جس میں ملک کے اندر پہیہ جام ہڑتال، شٹر ڈائون اور ملک کے مختلف ڈویژنز او رہیڈ کوارٹرز میں جلسوں اور مظاہروں کا شیڈول طے کیا جائے گا اور ساتھ ہی یہ فیصلہ بھی کیا جائے گا، اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ کب کیا جائے گا، اس کی تاریخ کا تعین کیا جائے گا۔

انہوں نے صحافیوں کو مخاطب کرتے ہوئے آپ نے دیکھ لیا کہ کس اتفاق رائے کے ساتھ ہم اپنے معاملات کو آگے بڑھا رہے ہم عوام کو کسی قیمت پر پر مایوس نہیں ہونے دیں گے جس جذبے کے ساتھ عوام نے پی ڈی ایم کے تمام جلسوں میں شرکت کی اور جس طرح عوام کا رسپانس بڑھ رہا ہے اور آگے کی طرف آرہا ہے اس میں انشاء اللہ اضافہ ہوگا، لاہور کا جلسہ تاریخی ہوگا اور یہ حکومت کیلئے آخری کیل ثابت ہوگا۔

گرفتاریوں کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہاکہ ہم نے سوچا بھی نہیں گرفتاری کیا چیز ہوتی ہے ؟ پی ڈی ایم کے جلسے کے حوالے سے سوال پر حکومت کو فرق پڑ چکا ہے، اب اس کی کرسی کی چولیں ہل چکی ہیں، ابھی ایک دھکا دینے کی اور ضرورت ہے۔

مولانا فضل الرحمن نے کہاکہ اگر ہم نے استعفے دے دیئے تو پھر ان کی طرح واپس نہیں چاٹیں گے، ایک اور سوال پر انہوں نے کہاکہ سلیکٹر ان کے ساتھ کھڑے ہیں یا نہیں کھڑے، تحریک پورے سسٹم کے خلاف ہے ،دھاندلی کے خلاف اور دھاندلی کر نے والے خود سوچیں ان کا انجام کیا ہوگا اور عوام کے تاثرات کیا ہیں ؟ اس موقع پر مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ جو مولانا صاحب نے بات کردی ہم سب کی بات وہی ہے۔