آئی جی پنجاب نے پیشہ ور گواہوں کے سدباب کا حکم دیدیا

آئی جی پنجاب نے پیشہ ور گواہوں کے سدباب کا حکم دیدیا

( علی ساہی ) آئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے پیشہ ور گواہوں کے سدباب کیلئے تین سے زائد کیسز میں ایک ہی گواہ کی نشاندہی کرنے والا فیچر آئی ٹی سسٹم میں شامل کرنے کا حکم دیدیا، عوام کی سہولت اور مسائل کے حل کیلئے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے استعمال کو مزید بڑھانے کی ہدایت کردی۔

تفصیلات کے مطابق آئی جی پنجاب کی زیرصدارت اجلاس میں پولیس کے آئی ٹی پراجیکٹس، انکی اپ گریڈیشن اور جدید پولیسنگ سمیت دیگر متعلقہ امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس موقع پر آئی جی شعیب دستگیر کا کہنا تھا کہ ہر مقدمہ کی تفصیلی پراگریس رپورٹ چیک کرنے کیلئے پولیس سٹیشن ریکارڈ مینجمنٹ سسٹم میں نیا فیچر شامل کیا جائے۔

داخلی و خارجی راستوں پر جدید کیمروں کے ساتھ چوری شدہ گاڑیوں کا تفصیلی ریکارڈ بھی انٹی گریٹڈ سسٹم میں موجود ہو۔ انویسٹی گیشن کی ایپ میں سنگین مقدمات میں سزا ؤں کی شرح کی نشاندہی کرنے والے فیچر کا اضافہ کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی منشیات کے مقدمے میں مال مقدمہ بروقت جمع نہ کروانے والے پر سسٹم الرٹ جاری کرے، ایم ایل سی کروانے یا ڈی این اے سیمپل بھجوانے میں تاخیر کا سبب بھی کریمنل ریکارڈ مینجمنٹ سسٹم میں ظاہر ہونا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ کریمنل ریکارڈ مینجمنٹ سسٹم میں ملزمان کی شناخت پریڈ اور ضمنیات کے ساتھ انویسٹی گیشن افسرکا نام بھی ریکارڈ میں ظاہر ہونا چاہئے۔ اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمد، ڈی آئی جی آئی ٹی وقاص نذیر، ڈی آئی جی لیگل جواد ڈوگر اور اے آئی جی مانیٹرنگ عثمان باجوہ سمیت دیگر پولیس افسران بھی موجود تھے۔