عائشہ عمر کا مسلسل جنسی ہراساں کیے جانے کا انکشاف

عائشہ عمر کا مسلسل جنسی ہراساں کیے جانے کا انکشاف

سٹی 42: جنسی ہراسانی کے خلاف سب سے پہلے ہالی ووڈ سے آواز اٹھنے کا سلسلہ ’ می ٹو‘ کی شکل میں شروع ہوا جہاں جنسی ہراسانی کا شکار ہونے والی بہت سی اداکارائوں  نے بڑی اور نامور شخصیات پر الزامات عائد کیا اور پھر الزامات کی یہ لہر ہالی ووڈ سے بالی ووڈ اور اور پھر وہاں سے ہوتے ہوئے لالی ووڈ آپہنچی۔ابتداءمیں ایمان سلیمان، نادیہ جمیل، فریحہ الطاف، ماہین خان اور اس کے بعد میشا شفیع کی جانب سے بھی جنسی ہراسانی کا شکار ہونے کا اعتراف سامنے آیا تاہم ابھی میشا شفیع کا معاملہ تھما ہی تھا کہ اداکارہ عائشہ عمر نے بھی جنسی ہراسانی کا شکار ہونے کا انکشاف کیا ہے۔

مقبول ترین ڈرامہ بلبلے سے سے پہچانی جانے والی اداکارہ و میزبان عائشہ عمر نے ہراساں کیے جانے کا انکشاف اپنے سوشل میڈیا کے انسٹا گرام پر لگائی گئی ایک پوسٹ میں کیا۔عائشہ عمرنے اپنے پیغام میں ’ می ٹو ‘مہم پر بات کی۔اداکارہ نے کہا کہ میری نظر میں روز میکگاون (جنہوں نے می ٹو مہم کا آغاز کیا تھا)دنیا کی سب سے مضبوط خاتون ہیں ۔اداکارہ نے اس حوالے سے بات کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ انہیں کراچی منتقل ہونے کے بعد محض 23برس کی عمر سے ہی مسلسل اور متعدد بار ایک ہی شخص کی جانب سے ہراساں کیا گیا جس کی وجہ سے انہوں نے شدید ذہنی اذیت برداشت کی۔

View this post on Instagram
. In 2017, Rose McGowan decided to break the silence about Hollywood and one of the most powerful men in it, Harvey Weinstein. She decided to tell her story to the world. Did the world believe her? Not really. As is the case with most silence breakers. “Time” magazine, though recognised her as one of the Silence Breakers and their Person of the year, for speaking out about sexual harassment/assault. Soon after, several other actresses started sharing their stories of assault by the same monster. Her book “Brave” tells her story in her own voice. A singular voice that stands in a large arena full of women with similar stories of assault and rape. . In my eyes, Rose is one of the bravest women in the world today. I have watched several of her interviews and the way she articulates her feelings, emotions and thoughts is mesmerising. She hits the nail on the spot. Every single time. Rose is also an angry woman. A woman who allows herself to feel and feels no need to justify her emotions to anyone. Her fight is to allow all women in society to feel angry for what they have been through. For what they have been made to go through. Two years ago, I finally allowed myself to acknowledge and talk about my own sexual harassment story by a powerful monster, twice my age. When Rose agreed to go live with me, I felt I was dreaming. It was unreal. I thought non-stop about everything that I wanted to ask her, everything that I wanted to tell her about Pakistan. But she’s been asked everything and she’s answered everything.... that’s why I decided to chat with Rose about how she is doing right now, at this moment in her life, let the conversation flow freely.... and it did... it was real and honest, probably uncomfortable for some.... I did think of some solid questions to ask but never got around to them... they are all still floating in my head. We plan to go live again in a week, and this time go deeper into the various layers and constructs of societies all over the world. Would love for you all to join. Until next time folks! ????????‍♀️✨❤️ . . #ayeshaomar #rosemcgowan #metoo #feminism #feminist #womensupportingwomen #timesup #speakup #crazy #keepitreal #hereandnow

A post shared by Ayesha Omar (@ayesha.m.omar) on

یاد رہے کہ چند ماہ قبل عائشہ عمر نے اداکار احسن خان کے شو میں شرکت کی ،جس کا مختصر سا ویڈیو کلپ وائرل ہو ا تھا ہے۔ ویڈیو میں عائشہ نے لب کشائی کرتے ہوئے کہا تھا کہ اپنی زندگی میں کیریئر کے دوران جنسی ہراسانی کے عمل سے گزر چکی ہوں اس لیے میں اندازہ کر سکتی ہوں کہ اس وقت کسی پر کیا گزرتی ہے۔ عائشہ عمر نے کا یہ بھی کہنا تھا کہ میں ابھی اس موضوع پر بات کرنا مناسب نہیں سمجھتی لیکن ہوسکتا ہے بعد میں کبھی خاموشی توڑ دوں لیکن میں یہ بھی بتانا چاہتی ہوں کہ وہ دن دور نہیں جب میں جنسی طور پر ہراساں کرنے والے کا نام بتا دوں۔واضح رہے کہ کچھ عرصہ قبل پاکستان فلم انڈسٹری کے معروف فلم ساز جامی نے بھی جنسی زیادتی کے حوالے سے بڑا انکشاف کیا تھا۔